Notice: Trying to access array offset on value of type bool in /home/urducom1/azadi.com.pk/wp-content/themes/the-rex/library/core.php on line 537

اردو ہمارے شاندار ماضٰی کی آمین ،روشن مستقبل کی نوید ،ایشال وقار

13
42
Share:

ایشال وقار
جماعت: ششم ای اسلامیہ انگلش سکول ابوظہبی، متحدہ عرب امارات

انسان جب جہاں آب و گل میں جلوہ افزور ہواتو ا سے اپنے جذبات و احساسات کے اظہار کی یاد ستانے لگی- اظہار کے شوق نے الفاظ کا روپ دھار کر زبانوں کی تشکیل کی-
یہ حقیقت اظہر من الشمس ہے کہ زبان و ادب کسی قوم کے داخلی وخارجی حقائق منظر عام پر لاتا ہے- فطرت کا وہ معرکہ سر انجام دیتا ہے جو شمشیر و سناں کے بس کی بات نہیں-
اللہ تعالی کاعظیم احسان ہے کہ اس نے مسلمانان ہند کو اردو جیسی لطیف زبان جس کا خمیر عربی اور فارسی سے گوندھا گیا،عطا کی- اس میں ترکی زبان کی حلاوت و شیرینی اور عالاقائی زبانوں کی آمیزش شامل ہے-

جب شاطر فرنگی نے اس سرزمین پر قدم رکھاتو اس نے حکمرانی کے خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے کے لئے ١٨٠٠میں فورٹ ولیم کالج قائم کیا تھا کہ سادہ اور سہل زبان میں افسانوی ادب کا ترجمہ ہو مگر جیسا کہ قانونِ قدرت ہے کہ یرتخریب میں تعمیر کا پہلو مضمر ہوتا ہے،ان کا یہ قدم اردو کے حق میں آب حیات ثابت ہوا- فرہنگ کی شاطہ نے عروس اردو کی نکھار کو دو چند کر کے اسے جلاء بخش دی-

اردو زبان کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ یہ زبان ہمارے شاندار ماضی کی آمین اور مستقبل کی نویدہے-
تاریخ شاہد ہے کہ اگر کسی قوم کو محکوم بنانا ہو تو اسے ادبی لحاظ سے اپاہج کر دو شایدیہی وجہ تھی کہ انگلستان میں اپنا علمی سرمایہ دیکھ کر شاعر مشرق کا جگر سیپارہ ہوا-


یہ بھی پڑھیں


اردو زبان میں شاہ ولی اللہ کا ترجمہ قرآن اور علامہ اقبال کا الہام، سرسید ، حالی، آزاد، میر و سودا ،انیس و دبیر کی علمی و شعری کی کاوشیں موجود ہیں- ا س وجہ سے مولوی عبدالحق اردو کے قائداعظم بن کر اسی کے دفاع کے لئے اپنی زندگی کے آخری لمحےتک ہندوؤں سے برسر پیکار رہے اپنی پنشن تک صرف کر کے اردو سائنس کالج اور عثمانیہ یونیورسٹی کے قیام سے ثابت کر دیا کہ اردو کسی بھی زبان سے کم نہیں-

گویا کہ مملکت خداداد پاکستان کی ترقی کے لئے اردو زبان کو جائز مقام دینا پاکستان کا اولین تقاضا ہے – یہ زبان مثل شیرازے کی ہے ، جو کہ چاروں صوبہ جات میں علاقائی زبانوں میں رابطے کا ذریعہ ہے- علاقائیت کی نفی کر کے احساس قومیت کے جذبے کو پروان چڑھاتی ہے- من حیث القوم ہمیں نا قابل تسخیر بناتی ہے ملی و قومی ترقی کا اولین تقاضا ہےکہ ان نادیدہ طاقتوں کو شکست دیں جو کہ اس ملک کوفکری لحاظ سے تباہ کرنا چاہتے ہیں-

قومی زبان نےپیشہ ورانہ علوم کی کتب کا اردو میں ترجمہ کر کے ثابت کر دیا ہے کہ ہم اس زبان کوبھی ذریعہ تعلیم بنا سکتے ہیں-

چینی صدر نے کسی موقع پر کہا تھا کہ چین گونگا نہیں ہے ، پاکستان بھی الحمدللہ اردو جیسی عظیم زبان رکھتا ہے- ہم اردو کو ذریعہ تعلیم بنا کر استحصالی نظام کا خاتمہ کر کے نونہالان چمن کی عمدہ انداز سے کردار کی تشکیل کر سکتے ہیں-

وقت کا اولین تقاضا ہے کہ ہم اردو کو دفتری زبان بنانے، سیاست کے ایوانوں اور کھیل کے میدانوں میں زبان کو اپنانے میں عار نہیں بلکہ فخر محسوس کریں-

تاہم بین القوم زبان انگریزی کومخالف نہیں بلکہ معاون سمجھیں – انگریزی زبان سکھانے کے لسانی ادارے بنائے جائیں اور تعلیمی اداروں میں زبردستی طلبہ پر مسلط کرکے تعلیمی ترقی نہ روکی جائے-

امید قوی ہے کہ ہمارے حکام بالا اس تاریخی، مذہبی اورتہذیبی زبان کو فروغ دینے کے لیے ہمہ وقت تیار رہیں گے کیونکہ زبان ہی کسی قوم کا وقار و نشان افتخار ہوا کرتی ہے – ہماری زبان کی دھوم سارے جہاں میں رہے گی – ان شاء اللہ

وہ عطر دان سا لہجہ میرے بزرگوں کا
رچی بسی ہوئی اردو زبان کی خوشبو

Share:

Notice: Trying to access array offset on value of type bool in /home/urducom1/azadi.com.pk/wp-content/themes/the-rex/inc/libs/bk_core.php on line 10

42 comments

  1. فیصل سلیمان جدون 16 January, 2022 at 23:34 Reply

    ماشاء الل- زبردست- اللہ پاک علم و ایمان میں برکتیں عطا فرمائے – آمین

  2. Muhammad ibrahim khan 17 January, 2022 at 08:51 Reply

    Everyone please Don’t vote because eshaal waqar, her brother aleyan and her sister meeral are very mean people and they shouldn’t get this much respect let’s start a rebellion but if you like her essay then don’t join the rebellion because the rebellion needs haters not likers.
    – S . H . I . O . W = Stop hate in our world.

  3. Anwar 17 January, 2022 at 11:47 Reply

    Who are you? and how do you know this? and aren’t you the one being the hater and bad person? why are you so sure about this?

  4. Rohaan shahzad 17 January, 2022 at 13:53 Reply

    hi u should not say like that it’s not good
    “If u cant spread love then don’t also spread hate to others”

  5. saad ul haq 18 January, 2022 at 14:30 Reply

    This essay is full of details, and I am surprised that at such a Little age this has been written by you, Bravo

    • Saad 19 January, 2022 at 13:43 Reply

      Excellent achievement. This Generation Z is undoubtedly way ahead of us and will carry the legacy better. Keep up the good work Eshal.

Leave a reply